Prime Minister Imran Khan chaired a meeting of National Export Development Board.

October 01, 2021

The meeting was attended by Finance Minister Shaukat Fayyaz Tareen, Industries & Production Minister Makhdoom Khusro Bakhtiar, Advisor on Commerce & Investment Abdul Razak Dawood, SAPM on Health Dr Faisal Sultan, SAPM on Political Communication Dr Shabaz Gill, CEO Drug Regulatory Authority of Pakistani (DRAP) Asim Rauf, representatives of Pharmaceutical and Salt sectors and senior officers concerned.

 

The Prime Minister was briefed on the potential of diversification of exports, especially in salt and pharmaceutical sectors.

 

The Prime Minister was briefed that Pakistan is lucky to be blessed with all types of salt available in the world. These include rock salt, sea salt and lake salt.

 

With a reserve size of 6.2 Billion tons, Khewra Salt Mine is the second largest salt range in the world. Pakistan has also sea salt reserves along 1050 KM long coastline.

 

Almost 60% of total 350 Million tons global salt consumption is made by the chemical industry.

 

Pakistan’s current annual salt production is  4 Million tons, whereas just 3 lac tons are being exported each year.

 

Hub Salt and Governments of Balochistan has initiated a new Solar Salt Project to tap Pakistan’s huge potential in salt export. This new Solar Salt Project will be the world’s largest salt works facility, and will boost the salt exports by $400 Million in 2023 and will continue to grow by $200 Million per annum in subsequent years.

 

Moreover, it was told that currently Pakistan’s  pharmaceutical exports are worth $275 Million with a growth potential of $74.3 Billion. This growth potential can be materialised by investing in the machinery and equipments, streamlining the registration process for Pakistani medicines, entering into Joint Ventures with reputed Multinational Companies (MNCs), and the appointment of sales and marketing teams in international markets for brand building.

 

The Prime Minister directed the authorities concerned to take all necessary measures to exploit full potential of exports diversification in salt and pharmaceutical sectors.

 

The Prime Minister reiterated that the government is focused on creating business friendly environment in the country for further strengthening the economy and increasing employment opportunities.

 

The Prime Minister emphasized that  business community should adopt modern technologies to achieve maximum value addition.

 

وزیراعظم عمران خان کی زیر صدارت نیشنل ایکسپورٹ ڈویلپمنٹ بورڈ کا اجلاس ہوا۔

 

 اجلاس میں وزیر خزانہ شوکت فیاض ترین ، وزیر صنعت و پیداوار مخدوم خسرو بختیار ، مشیر تجارت و سرمایہ کاری عبدالرزاق داؤد ، معاونینِ خصوصی ڈاکٹر فیصل سلطان، ڈاکٹر شہباز گل ،چیف ایگزیکٹیو آفیسر ڈرگ ریگولیٹری اتھارٹی آف پاکستان ( ڈریپ) عاصم رؤف ، دواسازی اور نمک کے شعبوں کے نمائندے اور متعلقہ اعلی افسران نے شرکت کی۔

 

 وزیراعظم کو خاص طور پر نمک اور دواسازی کے شعبوں میں برآمدات میں تنوع کے امکانات سے آگاہ کیا گیا۔

 

 وزیراعظم کو بتایا گیا کہ پاکستان اس لحاظ سے خوش قسمت ہے کہ یہاں ہر قسم کا نمک دستیاب ہے۔  ان میں چٹانی نمک ، سمندری نمک اور جھیلوں سے حاصل شدہ نمک شامل ہیں۔

 

 6.2 بلین ٹن کے مجموعی ذخائر کے ساتھ کھیوڑا سالٹ مائن دنیا میں نمک کی دوسری بڑی کان ہے۔  پاکستان کے پاس 1050 کلومیٹر طویل ساحلی پٹی کے ساتھ سمندری نمک کے وسیع ذخائر بھی ہیں۔

 

 350 ملین ٹن عالمی نمک کی کھپت کا تقریباً 60  فیصد کیمیائی صنعت بناتی ہے۔

 

 پاکستان کی سالانہ نمک کی پیداوار 4 ملین ٹن ہے ، جبکہ ہر سال صرف 3 لاکھ ٹن برآمد کیا جا رہا ہے۔

 

 حب سالٹ اور بلوچستان کی حکومت نے نمک کی برآمد میں پاکستان کے وسیع امکانات کو بروئے کار لانے کے لیے ایک نیا سولر سالٹ منصوبہ شروع کیا ہے۔  یہ دنیا کا سب سے بڑا نمک پیدا کرنے کا منصوبہ ہوگا ، اور نمک کی برآمدات کو 2023 میں 400 ملین ڈالر سے بڑھا دے گا اور آئندہ سالوں میں 200 ملین ڈالر سالانہ سے اضافہ کرتا رہے گا۔

 

 مزید بتایا گیا کہ اس وقت پاکستان کی دواسازی کی برآمدات 275 ملین ڈالر ہیں جو مزید 74.3 بلین ڈالر سے بڑھنے کی استعداد رکھتی ہیں ۔  مشینری اور سازوسامان میں سرمایہ کاری ، پاکستانی ادویات کے رجسٹریشن کے عمل کو ہموار کرنے ، معروف ملٹی نیشنل کمپنیوں (MNCs) کے ساتھ منصوبوں میں اشتراک ، اور برانڈنگ  کے لیے بین الاقوامی منڈیوں میں سیلز اور مارکیٹنگ ٹیموں کی تقرری کے ذریعے ترقی کی اس استعداد سے بھرپور فائدہ اٹھایا جا سکتا ہے۔

 

 وزیر اعظم نے متعلقہ حکام کو ہدایت کی کہ نمک اور دواسازی کے شعبوں میں برآمدات میں تنوع کی مکمل صلاحیت سے فائدہ اٹھانے کے لیے تمام تر ضروری اقدامات کیے جائیں۔

 

 وزیراعظم نے اس بات کا اعادہ کیا کہ حکومت معیشت کو مزید مضبوط بنانے اور روزگار کے مواقع بڑھانے کے لیے ملک میں کاروبار دوست پالیسیوں پر توجہ مرکوز کر رہی ہے۔

 

 وزیراعظم نے اس بات پر بھی زور دیا کہ کاروباری برادری کو زیادہ سے زیادہ ویلیو ایڈیشن کے حصول کے لیے جدید ٹیکنالوجی اپنانی چاہیے۔