* Prime Minister Imran Khan chaired meeting of Federal Cabinet.

July 27, 2021

* On the arrival of the Prime Minister, cabinet members welcomed the Prime Minister by thumping the desks and congratulated Prime Minister Imran Khan on significant victory of Pakistan Tehreek-e-Insaf in azad kashmir elections. The success of Pakistan Tehreek-e-Insaf in Azad Kashmir elections is a clear manifestation of the confidence of the people of Azad Kashmir in Prime Minister Imran Khan's vision and policies of the present government. 

* The Cabinet was briefed on the expenditure incurred in liei of security on political leaders including Chief Ministers, Ministers, Advisors & Special Assistants, Judges, former Presidents & Prime Ministers and government figures in the Federal Capital, Punjab Province and Khyber Pakhtunkhwa Province.

The Cabinet was informed that 762 police personnel, 14 Rangers and 50 FC officers are deployed by the Federal Capital Police on the security of the President, Prime Minister, Governors, Chief Ministers, Ministers of State, Advisors and Special Assistants with a total expenditure of 700.98 million per annum. The security of  Judges is manned by 377 policemen, 24 Rangers and 8 FC personnel with an annual expenditure of Rs 287.368 million. Similarly, a total of 106 policemen, 4 Rangers, 47 FC personnel are deployed on the security of government figures with an expenditure of Rs 109.7 million. Thus, the total expenditure is Rs. 1098.08 million per annum. 

The annual cost of providing security to the Prime Minister, Governor, Chief Minister by Punjab Police is Rs. 446.86 million. Rs 105.87 million for providing security to former Chief Ministers, Federal and Provincial Ministers and Advisors & Special Assistants, Rs. 1143.17 million for providing security to Judges and Rs. 833.616 million per annum for providing security to government figures. Thus, the total expenditure is Rs. 2529.5 million per annum. 

The annual expenditure of Khyber Pakhtunkhwa police in provision of security is about Rs. 998.34 million. 

 The Prime Minister said that the government's primary responsibility is to protect the taxpayers' money. "The people should have confidence that their tax money is being used properly," he said. The Cabinet decided that security would be provided on the basis of valid reasons and not as a status symbol. In this regard, the Cabinet approved the setting up of a high level Threat Assessment Committee. The Prime Minister directed that a detailed briefing be given in the next meeting on setting standards for the provision of security. 

Agenda No:01

Federal Cabinet briefed on progress made so far on electronic voting machines and voting rights for Pakistani diaspora.

The Federal Minister for Science and Technology and Adviser Parliamentary Affairs briefed the Cabinet on the progress made so far. 

The Prime Minister emphasized that in order to fully address any reservations about election process, it is necessary to ensure the use of technology in the voting rights process. 

Referring to the opposition's meaningless criticism of the Azad Kashmir elections, the Cabinet noted that the use of technology would help ensure that no objection could be raised to the election process in future.  

Agenda No:02

 The agenda for the briefing on removal of encroachments in the federal capital was postponed. 

Agenda No:03

In view of the government approvals required for starting business and business activities in the country, Official approvals NOCs and other regulations and the consequent difficulties faced by the business community, especially those who launch new businesses, the Cabinet has taken a major decision and empowered the Investment Board to remove the obsolete rules and conditions regarding facilitating the business process and to issue the proposed legislative process. It should be noted that ease of doing business is among the top priority of the current government. And in this regard, Pakistan has achieved considerable success in the current tenure. 

 

Agenda No:04

Cabinet approves new framework and strategy on investment agreements with Foreign Countries of Pakistan.  

Regarding Pakistan's bilateral agreements on investment from foreign countries, the Cabinet was informed that so far 53 agreements have been signed by Pakistan with 48 countries regarding investment. The Cabinet was informed that these agreements were considered of key importance in terms of overseas investment and investor facilitation. Pakistan is among the top countries in this regard who founded bilateral investment agreements. Pakistan's first agreement on bilateral investment was signed with Germany in 1959. The Cabinet was told that since these agreements were settled on the basis of standard terms, with changing times, these agreements led to various conflicts and sometimes some cases reached the world courts. Cabinet approves following proposals to ensure that bilateral investment agreements are made beneficial for the country 

* Sixteen agreements are such which have not been ratified so far and no further progress should be made regarding them.

* Twenty-three (23) agreements that have completed their term should be terminated, but the Ministry of Foreign Affairs was directed to take the countries concerned into confidence and bring these issues to a logical conclusion. 

* Nine such agreements which are still in place should be discussed with the countries concerned to settle the issues amicably.

* The Cabinet was also briefed on the new Template prepared by the Investment Board in consultation with the Ministry of Law, Head of the International Investment Dispute Unit and the Attorney General's Office on bilateral investment at the international level under which issues regarding future investment with the outside world will be sorted out. 

* Cabinet directed that a comprehensive framework be formulated to protect the country from any financial loss as a result of future investment disputes

* The Cabinet directed Investment Board to formulate a comprehensive strategy in consultation with Ministry of Foreign Affairs, Ministry of Finance, Commerce, Ministry of Law, International Investment Dispute Settlement Unit of Attorney General of Pakistan, National Security Division and other stakeholders regarding investment related dispute resolution. 

 

Agenda No: 5

Cabinet allows Pakistan Red Crescent Society to import five ambulances from Japan. The ambulances have been donated by the Society for Promotion of Japan Diplomacy Tokyo, a Japanese government body. 

 

Agenda No. 06

The Interior Secretary informed the Cabinet about the court's order in a writ petition filed in the Islamabad High Court regarding development in sector E-11. The Cabinet approved the setting up of a committee to look into the issues along with directions to the CDA to ensure implementation of the court's decision which will make its recommendations within two weeks. 

 

Agenda No. 07

The agenda for considering the UAE government's request for the extradition of a Pakistani national named Naseem Hussain was postponed 

 Agenda No. 08

Similarly, the UAE government's request for extradition of a Pakistani national named Ghulam Shabir was also postponed 

Agenda No: 09

   The Cabinet approved the inclusion of Prevention of Smuggling of Migrants Act 2018 and Prevention of Trafficking in Person Act 2018 in the FIA Act, 1974 scheduled to make FIA's jurisdiction more effective in the prevention of human trafficking. 

 

Agenda No. 10

Cabinet approves proposal to have dual citizenship with Czech Republic. 

 

Agenda No. 11

Cabinet approves country's first National Cyber Security Policy. 

 

Agenda No. 12

Cabinet approves Government Advertisement Policy 2021.

 

Agenda No. 13

Cabinet approves appointment of Commodore Rahat Ahmed Awan, Tamgha e Imtiaz (Military) as Managing Director Korangi Fisheries Harbour Authority Karachi. 

 

Agenda No. 14

The Cabinet discussed the appointment of board of governors of Pakistan Agricultural Research Council.

 

Agenda No. 15

  Chief Statistician posting agenda postponed  

Agenda No. 16

Cabinet approves appointment of four members to the Board of Governors of Hydrocarbon Development Institute of Pakistan. The members include Moin Raza Khan, Syed Farasat Shah, Dr Abdullah Malik and Shahid Saleem Khan. 

 

Agenda No. 17

The Cabinet approved to give temporary charge of GENCO Holding Company Limited to Ahmed Timur Nasir, Director and Member GHCL Board of Directors till the appointment of Permanent Chief Executive. 

 

Agenda No.:18 

Cabinet approves appointment of Board of Directors of Genco Holding Company 

 

Agenda No:19

The decisions taken by the Cabinet Committee on Energy in its meeting held on 15th July, 2021 were ratified. 

 

Agenda No. 20

The Cabinet ratified the decisions taken by the Economic Coordination Committee in its meeting held on July 16, 2021.

In these decisions 

Release of NGMS (Next Generation Mobile Services) Spectrum in Pakistan for Imporvment of Mobile Broadband Services amid COVID-19

 

Release of NGMS (Next Generation Mobile Services) Spectrum in AJ&K for Imporvment of Mobile Broadband Services amid COVID-19

There are important decisions.

Agenda:

Cabinet decides that sale tax on sugar will be levied at EX-Mill price till November 30, 2021 to check increasing sugar prices.  

 

* Cabinet was briefed on the situation of spread of the COVID-19. The Cabinet directed that SOEs to ensure vaccination of their employees.

 

اسلام آباد، 27جولائی2021:

٭ وزیرِ اعظم عمران خان کی زیر صدارت وفاقی کابینہ کا اجلاس

٭وزیرِ اعظم کی آمد پر کابینہ اراکین نے ڈیسک بجا کر وزیرِ اعظم کا استقبال کیا اور آزاد کشمیر الیکشن میں پاکستان تحریک انصاف کی واضح کامیابی پر وزیرِ اعظم عمران خان کو مبارکباد دی۔آزاد کشمیر الیکشن میں پاکستان تحریک انصاف کی کامیابی وزیرِ اعظم عمران خان  کے ویژن اور موجودہ حکومت کی پالیسیوں پر آزاد کشمیر کے عوام کے اعتماد کا واضح مظہر ہے۔ 

٭ کابینہ کو وفاقی دارالحکومت، صوبہ پنجاب اور صوبہ خیبرپختونخواہ میں سیاسی رہنماؤں بشمول وزیرِ اعلیٰ، وزراء، مشیران و معاونین، جج صاحبان، سابقہ صدور و وزیرِ اعظم صاحبان اور سرکاری شخصیات کے ساتھ تعینات سیکیورٹی اہلکاروں اور ان پر اٹھنے والے اخراجات پر تفصیلی بریفنگ۔

کابینہ کو بتایا گیا کہ وفاقی دارالحکومت  پولیس کی جانب سے صدر، وزیرِ اعظم، گورنرز، وزیرِ اعلیٰ، وزراء، وزرائے مملکت، مشیران اور معاونین خصوصی کی سیکیورٹی پر 762پولیس اہلکار، 14رینجرز جبکہ 50ایف سی رہلکار تعینات ہیں جن پر کل 700.98ملین سالانہ اخراجات ہیں۔ جج صاحبان کی سیکورٹی پر 377پولیس اہلکار، 24رینجرز اور 8ایف سی اہلکار تعینات ہیں جن کے اخراجات 287.368ملین روپے سالانہ کے اخراجات ہیں۔ اسی طرح سرکاری شخصیات کی سیکیورٹی پر کل 106پولیس اہلکار، 4رینجرز، 47ایف سی اہلکار تعینات ہیں جن کا خرچہ  109.7ملین روپے ہے۔ اس طرح یہ کل خرچہ 1098.08ملین روپے سالانہ ہے۔ 

پنجاب پولیس کی جانب سے وزیرِ اعظم، گورنر، وزیر اعلیٰ کو سیکیورٹی فراہم کرنے کا سالانہ اخراجات 446.86ملین روپے ہے۔ سابقہ وزرائے اعلیٰ، وفاقی و صوبائی وزراء اور مشیران و معاونین خصوصی کو سیکیورٹی فراہم کرنے کی مد میں 105.87ملین روپے، جج صاحبان کو سیکیورٹی فراہم کرنے کی مد میں 1143.17ملین روپے جبکہ سرکاری شخصیات کو سیکیورٹی فراہم کرنے کی مد میں 833.616ملین روپے سالانہ کے اخراجات ہیں۔ اس طرح کل اخراجات 2529.5ملین روپے سالانہ ہیں۔ 

سیکیورٹی کی فراہمی میں خیبرپختونخواہ پولیس  کے  سالانہ اخراجات تقریباً 998.34ملین روپے ہیں۔ 

 وزیرِ اعظم نے کہا کہ حکومت کی سب سے اولین ذمہ داری ٹیکس گزاروں کے پیسے کا تحفظ ہے۔ انہوں نے کہا کہ عوام کو یہ اعتماد ہونا چاہیے کہ ان کے ٹیکس کے پیسے کا جائز استعمال ہو رہا  ہے۔کابینہ نے فیصلہ کیا کہ سیکیورٹی بطور اسٹیٹس سمبل نہیں بلکہ جائز ضروریات کی بنیاد پر فراہم کی جائے گی۔ اس حوالے سے کابینہ نے اعلیٰ سطح کی تھریٹ اسیسمنٹ کمیٹی  کے قیام کی منظوری دی۔ وزیرِ اعظم نے ہدایت کی کہ  سیکیورٹی کی فراہمی کے حوالے سے معیار مقرر کرنے کے حوالے سے آئندہ اجلاس میں تفصیلی بریفنگ دی جائے۔ 

ایجنڈا نمبر:01

وفاقی کابینہ کو الیکٹرانک ووٹنگ مشینوں اور بیرون ملک مقیم پاکستانیوں کو حق رائے دہی کے حوالے سے  اب تک کی پیش رفت پر بریفنگ

وفاقی وزیر برائے سائنس اینڈ ٹیکنالوجی اور مشیر پارلیمانی امور نے کابینہ کو اب تک کی پیش رفت سے آگاہ کیا۔ 

وزیرِ اعظم نے اس بات پر زور دیا کہ الیکشن کے حوالے سے کسی بھی قسم کے تحفظات کو مکمل طور پر دور کرنے کے لئے ضروری ہے کہ حق رائے دہی کے عمل میں ٹیکنالوجی کے استعمال کو یقینی بنایا جائے۔ 

ٓآزاد کشمیر الیکشن کے حوالے سے اپوزیشن کی بے معنی تنقید  کا ذکر کرتے ہوئے کابینہ نے نوٹ کیا کہ ٹیکنالوجی کا استعمال اس امر کو یقینی بنانے میں مدد دے گا کہ انتخابی عمل پر کسی قسم کا اعتراض نہ اٹھایا جا سکے۔  

ایجنڈا نمبر:02

 وفاقی دارالحکومت میں تجاوزات کو ہٹانے  پر بریفنگ کا ایجنڈا موخر کر دیا گیا۔ 

ایجنڈا نمبر:03

ملک میں کاروبار کا آغاز کرنے اور کاروباری سرگرمیوں کے حوالے سے درکار سرکاری منظوریوں، این او سیز  و دیگر قواعد و ضوابط اور اس کے نتیجے میں کاروباری برادری خصوصاً نئے کاروبار کا اجراء کرنے والے افراد کی مشکلات کے پیش نظر کابینہ نے بڑا فیصلہ لیتے ہوئے سرمایہ کاری بورڈ کو یہ اختیار دیا ہے کہ وہ کاروباری عمل کو آسان بنانے کے حوالے سے فرسودہ قوانین و شرائط کو ختم کرنے کے لئے  مجوزہ قانون سازی  کرنے کا عمل کا اجراء کرے۔ واضح رہے کہ کاروبار میں آسانیاں پیدا کرنے (Ease of Doing Buiseness) موجودہ حکومت کی ترجیحات میں سے اولین ترجیح ہے۔ اور اس ضمن میں موجودہ دور میں  پاکستان نے خاطر خواہ کامیابیاں حاصل کی ہیں۔ 

 

ایجنڈا نمبر:04

کابینہ نے سرمایہ کاری کے حوالے سے پاکستان کے بیرونی ممالک سے معاہدوں کے حوالے سے نئے فریم ورک  اور حکمت عملی کی منظوری دی۔  

بیرونی ممالک سے سرمایہ کاری کے حوالے سے پاکستان کے دو طرفہ معاہدوں کے حوالے سے  کابینہ کو بتایا گیا کہ اب تک پاکستان  کی جانب سے 48ممالک کے ساتھ سرمایہ کاری کے حوالے سے53معاہدے کیے گئے ہیں۔کابینہ کو بتایا گیا کہ بیرون ملک سرمایہ کاری اور سرمایہ کاروں کی سہولت کے ضمن میں یہ معاہدے کلیدی اہمیت کے حامل سمجھے جاتے تھے۔ اس ضمن میں پاکستان سرفہرست ممالک میں شامل ہے جنہوں نے دوطرفہ سرمایہ کاری معاہدوں کی بنیاد رکھی۔ دوطرفہ سرمایہ کاری کے حوالے سے پاکستان کا پہلا معاہدہ 1959میں جرمنی کے ساتھ طے پایا۔کابینہ کو بتایا گیا کہ چونکہ یہ معاہدے اسٹینڈرڈ شرائط کی بنیاد پر طے پاتے تھے لہذا بدلتے وقت کے ساتھ ان معاہدوں کی وجہ سے مختلف تنازعات پیدا ہونے شروع ہوئے اور بسا اوقات بعض معاملات عالمی عدالتوں تک جا پہنچتے تھے۔ سرمایہ کاری کے حوالے سے دوطرفہ معاہدوں کو ملک کے لیے منافع بخش بنانے کو یقینی بنانے کے حوالے سے کابینہ مندرجہ ذیل تجویز کی منظوری دی 

٭ سولہ (16)  ایسے معاہدے جن کی ابھی تک توثیق نہیں ہوئی ان پر مزید کوئی پیش رفت نہ کی جائے

٭ تیئیس (23) ایسے معاہدے جو اپنی مدت پوری کر چکے ہیں ان کو ختم کردیا جائے  تاہم اس حوالے سے وزارتِ خارجہ کو  ہدایت کی گئی کہ وہ متعلقہ ممالک کو اعتماد میں لیکر ان معاملات کو منطقی انجام تک پہنچائیں۔ 

٭ نو (9) ایسے معاہدوں جن کی مدت ابھی جاری ہے ان کے اختتام کے حوالے سے متعلقہ ممالک سے بات چیت کی جائے  تاکہ ان معاہدوں کے حوالے سے معاملات کو خوش اسلوبی کے ساتھ طے کرتے ہوئے طے کیا جا سکے۔

٭ بین الاقوامی سطح پر دو طرفہ سرمایہ کاری کے حوالے سے سرمایہ کاری بورڈ کی جانب سے وزارتِ قانون،  انٹرنیشنل انویسٹمنٹ  ڈسپیوٹ یونٹ  کے سربراہ اور اٹارنی جنرل آفس کی مشاورت سے تیار کردہ نئے مسودے  (Template)   سے متعلق بھی  کابینہ کو بریفنگ دی گئی جس کے تحت مستقبل میں سرمایہ کاری کے حوالے سے بیرونی دنیا سے معاملات طے کیے جائیں گے۔ 

٭ کابینہ نے ہدایت کی کہ مستقبل میں سرمایہ کاری کے حوالے سے تنازعات  کے نتیجے میں ملک کو کسی قسم کے مالی نقصان سے بچاؤ  کے حوالے سے جامع فریم ورک وضع کیا جائے

٭ کابینہ کی سرمایہ کاری کے حوالے سے تنازعات کے حل کے حوالے سے سرمایہ کاری بورڈ  کو  وزارتِ خارجہ، وزارتِ خزانہ،  کامرس، وزارتِ قانون،  اٹارنی جنرل آف پاکستان کے انٹرنیشنل انویسٹمنٹ ڈسپیوٹ سیٹلمنٹ یونٹ، نیشنل سیکیورٹی ڈویژن  اور دیگر اسٹیک ہولڈرز کی مشاورت سے ایک جامع حکمت عملی تیار کرنے کی ہدایت۔ 

 

ایجنڈا نمبر: 5

کابینہ نے پاکستان ریڈ کریسنٹ سوسائٹی کو جاپان سے پانچ ایمبولینس درآمد کرنے کی اجازت دی۔ یہ ایمبولینسیں جاپان حکومت کے ادارے سوسائٹی فار پروموشن آف جاپان ڈپلومیسی ٹوکیو کی جانب سے عطیہ کی گئی ہیں۔ 

 

ایجنڈا نمبر06

سیکرٹری داخلہ کی جانب سے ای الیون سیکٹر میں ڈویلپمنٹ کے حوالے سے اسلام آباد ہائی کورٹ میں دائر رٹ پٹیشن میں عدالت کے حکم نامے سے کابینہ کو آگاہ کیا۔ کابینہ نے سی ڈی اے کو عدالت کے فیصلے پر عمل درآمد کو یقینی بنانے  کی ہدایت کے ساتھ ساتھ ان معاملات پر غور کرنے کے لئے کمیٹی کے قیام کی منظوری دی جو دو ہفتے میں اپنی سفارشات پیش کرے گی۔ 

 

ایجنڈا نمبر07

نسیم حسین نامی پاکستانی شہری کی حوالگی کے حوالے سے متحدہ عرب امارات حکومت کی درخواست پر غور کا ایجنڈا موخر کر دیا گیا 

 ایجنڈا نمبر08

اسی طرح غلام شبیر نامی پاکستانی شہری کی حوالگی کے حوالے سے متحدہ عرب امارات حکومت کی درخواست کا ایجنڈا بھی موخر کر دیا گیا 

ایجنڈا نمبر: 09

   کابینہ نے انسانی سمگلنگ کی روک تھام کے حوالے سے ایف آئی اے کی عمل داری کو مزید موثر بنانے کے لئے Prevention of Smuggling of Migrants Act 2018 اور Prevention of Trafficking in Person Act 2018کو ایف آئی اے ایکٹ 1974کے شیڈول میں شامل کرنے کی منظوری دی۔ 

 

ایجنڈا نمبر 10

کابینہ نے چیک ریپبلک کے ساتھ دوہری شہریت رکھنے کی تجویز کی منظوری دی۔ 

 

ایجنڈا نمبر 11

کابینہ نے ملک کی پہلی نیشنل سائبر سیکیورٹی پالیسی کی منظوری دی۔ 

 

ایجنڈا نمبر12

کابینہ نے حکومتی ایڈوٹائزمنٹ پالیسی 2021کی منظوری دی۔

 

ایجنڈا نمبر13

کابینہ نے کموڈور راحت احمد اعوان، ستارہ امتیاز(ملٹری) کی بطور منیجنگ ڈائریکٹر کورنگی فشریز ہاربر اتھارٹی کراچی تعیناتی کی منظوری دی۔ 

 

ایجنڈا نمبر14

کابینہ نے پاکستان ایگریکلچرل ریسرچ کونسل کے بورڈ آف گورنرز کی تعیناتی پر غور کیا گیا۔

 

ایجنڈا نمبر15

  چیف ماہر شماریات  (Chief Statistician)  تعیناتی کا ایجنڈا موخر کر دیا گیا  

ایجنڈا نمبر16

کابینہ نے ہائیڈروکاربن ڈویلپمنٹ انسٹی ٹیوٹ آف پاکستان کے بورڈ آف گورنرز میں چار ممبران کی تعیناتی کی منظوری دی۔ ان ممبران میں معین رضا خان، سید فراست شاہ، ڈاکٹر عبداللہ ملک اور شاہد سلیم خان شامل ہیں۔ 

 

ایجنڈا نمبر17

کابینہ نے جینکو ہولڈنگ کمپنی لمیٹڈ  احمد تیمورناصر، ڈائریکٹر  و ممبر جی ایچ سی ایل بورڈ آف ڈائریکٹرز، کو مستقل چیف ایگزیکیٹیو کی تعیناتی تک عارضی طور پر چارج دینے کی منظوری دی۔ 

 

ایجنڈانمبر:18 

کابینہ نے جینکو ہولڈنگ کمپنی کے بورڈ آف ڈائریکٹرز کی تعیناتی کی منظوری دی 

 

ایجنڈا نمبر:19

کابینہ کمیٹی برائے توانائی کے 15جولائی2021کے اجلاس میں لئے گئے فیصلوں کی توثیق کی گئی۔ 

 

ایجنڈا نمبر20

کابینہ نے اقتصادی رابطہ کمیٹی کے16جولائی2021کے اجلاس میں لئے گئے فیصلوں کی توثیق کی گئی۔

ان فیصلوں میں 

Release of NGMS (Next Generation Mobile Services) Spectrum in Pakistan for Imporvment of Mobile Broadband Services amid COVID-19

 

Release of NGMS (Next Generation Mobile Services) Spectrum in AJ&K for Imporvment of Mobile Broadband Services amid COVID-19

اہم فیصلے ہیں۔

ایجنڈا:

کابینہ نے چینی کی قیمتوں پر قابو پانے کے لئے فیصلہ کیا کہ 30نومبر2021تک چینی پر سیل ٹیکس کا نفاذ ایکس مل پرائس پر کیا جائے گا۔  

٭ کابینہ  کو کرونا وائرس کے پھیلاؤ کی صورتحال پر بریفنگ۔ کابینہ نے ہدایت کی کہ ایس او ایز اپنے ملازمین کی ویکسینیشن یقینی بنائیں۔