Prime Minister Imran Khan chaired a review meeting regarding the development of the merged tribal districts (previously FATA) and especially the funds provided by the Federal Government for the process

July 14, 2021

Prime Minister Imran Khan chaired a review meeting regarding the development of the merged tribal districts (previously FATA) and especially the funds provided by the Federal Government for the process.

 

 The meeting was attended by Finance Minister Shaukat Fayaz Tareen, Planning Minister Asad Umar, Chief Minister Khyber Pakhtunkhwa  Mahmood Khan, SAPM Dr Shahbaz Gill, SAPM Dr Waqar Masood, Finance Minister KP Taimur Saleem Jhagra, Finance Secretary and other senior officials.

 

  The meeting reviewed the ongoing development projects in the merged districts.

 The meeting was informed that the population of these areas is about 2.4 per cent of the national population, which makes the share of these areas in the NFC award to the tune of about Rs. 80 billion, while payments are currently being made by the federal government at 4%. 

 

  The meeting was informed that an amount of Rs. 84 billion was disbursed before the merger while Rs 146 billion is being paid after the merger.

 

  The meeting was informed that in the budget for the financial year 2021-22, a budget of about Rs. 130 billion has been allocated for Khyber Pakhtunkhwa particularly for merged tribal districts.

 

 The meeting was informed that the promises made by the federal government to the people of the former tribal areas for the construction and development were being fully fulfilled.

 

  Prime Minister Imran Khan said that construction and development of merged tribal districts is the top priority of the present government.  "The people of the these areas have made tremendous sacrifices for the country, which we greatly value," he said.

 

 The Prime Minister urged the provinces to play their part in fulfilling the promise made for the development of the merged tribal districts so that their development is realised in real terms.


 

وزیرِ اعظم عمران خان کی زیر صدارت انضمام شدہ علاقوں کی تعمیر و ترقی اور خصوصاً اس عمل کے لئے وفاق کی جانب سے فراہم کیے جانے والے فنڈز کے حوالے سے جائزہ اجلاس

٭ اجلاس میں وزیرِ خزانہ شوکت ترین، وزیرِ منصوبہ بندی اسد عمر، وزیرِ اعلیٰ خیبرپختونخواہ محمود خان، معاون خصوصی ڈاکٹر شہباز گل، معاون خصوصی ڈاکٹر وقار مسعود، وزیرِ خزانہ کے پی تیمور سلیم جھگڑا،  سیکرٹری خزانہ و دیگر سینئر افسران شریک

٭ اجلاس میں انضمام شدہ علاقوں میں جاری ترقیاتی سرگرمیوں کا جائزہ لیا گیا

٭ اجلاس کو بتایا گیا کہ انضمام شدہ علاقوں کی آبادی ملکی آبادی کا تقریباً 2.4فیصد ہے جس کے اعتبار سے این ایف سی ایوارڈ میں انضمام شدہ علاقوں کا حصہ تقریباً 80ارب روپے بنتا ہے جبکہ وفاق کی جانب سے اس وقت 4فیصد کے اعتبار سے ادائیگیاں کی جا رہی ہیں۔

٭ اجلاس کو بتایا گیا کہ انضمام سے پہلے84ارب ادا کیے جا رہے تھے جبکہ انضمام کے بعد 146ارب ادائیگیاں کی جا رہی ہیں۔ 

٭ اجلاس کو بتایا گیا کہ مالی سال 2021-22کے بجٹ میں انضمام شدہ علاقوں کی مد میں صوبہ خیبرپختونخواہ کے لئے تقریبا130ارب روپے کا بجٹ مختص کیا گیا ہے۔ 

٭ اجلاس کو بتایا گیا کہ انضمام شدہ علاقوں کی تعمیر و ترقی کے لئے وفاق کی جانب سے سابقہ قبائلی علاقوں کی عوام سے کیے گئے وعدوں کو مکمل طور پر پورا کیا جا رہا ہے۔ 

٭ وزیرِ اعظم عمران خان نے کہا کہ انضمام شدہ علاقوں کی تعمیر و ترقی موجودہ حکومت کی اولین ترجیح ہے۔ انہوں نے کہا کہ انضمام شدہ علاقوں کی عوام نے ملک کے لئے بے پناہ قربانیاں دی ہیں جن کو ہم انتہائی قدر کرتے ہیں۔ 

وزیرِ اعظم نے صوبوں پر زور دیا کہ انضمام شدہ علاقوں کی تعمیر و ترقی کے لئے کیے گئے وعدے کی تکمیل کے حوالے سے صوبے اپنا حصہ ڈالیں تاکہ تعمیر و ترقی کے عمل کو مزید مستحکم کیا جا سکے۔