وزیراعظم عمران خان کی زیر صدارت مون سون شجرکاری کے حوالے سے اجلاس

July 12, 2021

اجلاس میں معاون خصوصی برائے ماحولیاتی تبدیلی ملک امین اسلم شریک جبکہ وزیر اعلیٰ پنجاب سردار عثمان بزدار ، صوبائی وزیر برائے جنگلات پنجاب محمد سبطین خان، معاون خصوصی برائے وزیرِ اعلیٰ ڈاکٹر فردوس عاشق اعوان، چیف سیکرٹری پنجاب جواد رفیق ملک و دیگر افسران ویڈیو لنک کے ذریعے اجلا س میں شریک وزیرِ مملکت برائے اطلاعات فرخ حبیب بھی اجلاس میں موجود مون سون شجرکاری کے حوالے سے وزیرِ اعظم کو صوبہ پنجاب کے اہداف اور حکمت عملی کے بارے میں بریفنگ اجلاس کو بتایا گیا کہ حالیہ مون سون شجرکاری میں صوبہ پنجاب سرکردہ کردار ادا کرے گا۔ اجلاس کو بتایا گیا کہ گذشتہ دور حکومت میں سال 2016 تا 2018محض ایک کروڑ پودا لگایا گیا تھا لیکن موجودہ حکومت میں اب تک کروڑوں پودے اور درخت لگائے جا چکے ہیں۔ صوبائی وزیرِ جنگلات نے بتایا کہ محکمہ جنگلات میں سرسبزپنجاب کے حوالے سے چھ چھ ماہ کے اہداف مقرر کیے ہیں چئیرمین سی ڈی اے نے اجلا س کو وفاقی دارالحکومت میں شجر کاری مہم کے حوالے سے بھی بریف کیا وزیرِ اعظم عمران خان نے اجلاس سے خطاب کرتے ہوئے کہا کہ ماحولیات کے تحفظ کے لئے شجرکاری انتہائی اہم ہے۔ وزیر اعظم نے کہا کہ ماحولیاتی تحفظ موجودہ حکومت کی اولین ترجیحات میں شامل ہے۔ انہوں نے کہا کہ صوبہ خیبرپختونخواہ نے بلین ٹری سونامی کے حوالے سے قابل تقلید مثال قائم کی ہے۔  ماحول کے تحفظ کے حوالے سے  حکومت پاکستان کے اقدامات  کا عالمی سطح پر اعتراف کیا جا رہا ہے۔ وزیرِ اعظم نے ہدایت کی کہ صوبہ پنجاب میں ڈویژن اور  اضلاع  کی سطح پر شجر کاری کے پلان کو جلد از جلد حتمی شکل دی جائے وزیرِ اعظم نے ہدایت کی کہ  نہ صرف شجرکاری بلکہ شجرکاری مہم کی مانیٹرنگ اور نتائج  کے حوالے سے بھی جدید طریقہ کار کو برؤے کار لایا جائے وزیرِ اعظم نے ہدایت کی کہ شجر کاری مہم میں ٹائیگر فورس، طلبا، سول سوسائٹی اور سرکاری  و غیر سرکاری محکموں کی بھرپور شرکت  بھی یقینی بنانے پر توجہ دی جائے۔