PM chairs meeting of NEC

June 07, 2021

PM chairs meeting of NEC

Islamabad, 07 June 2021: A meeting of the National Economic Council was held under the Chairmanship of Prime Minister Imran Khan here in Islamabad on Monday. Chief Ministers of all the Provinces and other members of the NEC participated in the meeting. 

The National Economic Council approved the Macroeconomic Framework for Annual Plan 2021-22. NEC also approved the GDP growth projections for the financial year 2021-22. The proposed growth target of 4.8% was approved, with sectoral growth targets of 3.5% for Agriculture, 6.5 % for Industrial Sector, and 4.7 % for the Services Sector.

Ministry of Planning Development and Special Initiatives presented the Public Sector Development Program (PSDP) for 2021-22.  

NEC was informed that the revised estimate for the total development outlay of the ongoing year is Rs. 1527 billion. As against this the total development outlay for the next financial year would be over Rs. 2100 billion, including PSDP of Rs. 900 billion. This includes Rs. 244 billion for Transport & Communications, Rs. 118 billion for Energy, Rs. 91 billion for Water Resources, Rs. 113 billion for social Sector, Rs. 100 billion for Regional Equalization, Rs. 31 billion for Science & Technology & IT Sector, Rs. 68 billion for SDGs and Rs. 17 billion for Production Sector. 

The Council was informed that the focus of PSDP will be on Infrastructure improvement, Water Resources Development, Social Sector improvement, Regional Equalization, Skill Development, promotion of Science & Technology, and IT, as well as Climate Change mitigation measures. 

The meeting was informed that the PSDP would cater to the government’s plans to increase focus on lagging areas and regions. For this purpose, sufficient allocations have been made for projects of South Balochistan, various districts of Sindh, as well as for Gilgit Baltistan. Allocations have also been made for infrastructure projects of South districts of Punjab. Similarly, an allocation of Rs. 54 billion has been made for the newly merged districts of KP. In the Social Sectors, Higher Education Commission has been allocated Rs.  42 billion. 

 

NEC was informed that with the operationalization of the PPP Authority, a number of PPP projects are also being expeditiously processed for implementation.  These include Sukur-Hyderabad Motorway and Sialkot-Kharian Motorway, which are at an advanced stage. While other major projects such as Karachi Circular Railway (KCR), KPT-PIPRI Freight Corridor, Kharian – Rawalpindi Motorway, Balkasar – Mianwali Road, Quetta – Karachi -  Chaman Highway are also likely to be launched during the year. 

The Government has, for the first time ever made an allocation of Rs. 61 billion in PSDP for financing the viability gap of PPP projects, to make sure that PPP projects can be successfully implemented. 

Addressing the meeting the Prime Minister emphasized on increasing the pace of implementation of development projects to ensure that the gains made through stabilization of the economy could be translated into economic growth resulting in the well-being of the people of Pakistan  

 

وزیر اعظم عمران خان کی زیر صدارت نیشنل اکنامک کونسل کا اجلاس

اجلاس میں تمام  وزرائے اعلیٰ اور دیگر این ای سی ممبران شریک

اجلاس میں مالی سال 2021-22 کے لئے میکرواکنامک فریم ورک کی منظوری

آئندہ مالی سالے کے لئے شرح نمو کا ہدف 4.8 فیصد مقرر کرنے کی منظوری

آئندہ مالی سال میں زراعت  میں اضافے کا ہدف 3.5 فیصد، انڈسٹریئل سیکٹر 6.5 فیصد جبکہ سروسز سیکٹر میں 4.8 فیصد ہوگا

وزارتِ منصوبہ بندی کی جانب سے مالی سال 2021-22 کا پبلک سیکٹر ڈویلپمنٹ پروگرام پیش کیا گیا۔ 

اجلاس کو بتایا گیا کہ رواں مالی سال کے لئے ترقیاتی بجٹ نظر ثانی تخمینوں کے مطابق 1527 ارب روپے رہے گا

مالی سال 2021-22 کا ترقیاتی بجٹ 2100 ارب روپے مقرر کرنے کی منظوری

پی ایس ڈی پی کا حجم 900 ارب روپے ہوگا

ان میں سے 244 ارب ٹرانسپورٹ اینڈ کمیونیکیشن، 118 ارب روپے توانائی، 91 ارب روپے آبی وسائل، 113 ارب روپے سوشل سیکٹر، 100 ارب روپے علاقائی مساوات، 31 ارب روپے سائنس اینڈ ٹیکنالوجی اور آئی ٹی سیکٹر۔ 68 ارب روپے ایس ڈی جیز جبکہ 17 ارب روپے پروڈوکشن سیکٹر پر خرچ کیے جانے کی منصوبہ بندی کی گئی ہے۔ 

اجلاس کو بتایا گیا کہ پی ایس ڈی پی کا محور انفراسٹرکچر کی بہتری، آبی وسائل کی ڈویلپمنٹ، سوشل سیکٹر کی بہتری، علاقائی مساوات، اسکل ڈویلپمنٹ، سائنس اینڈ ٹیکنالوجی اور آئی ٹی کا فروغ اور ماحولیات کے حوالے سے اقدامات ہوں گے

 اجلاس کو بتایا گیا کہ پی ایس ڈی پی میں حکومت کی پالیسی کے مطابق ان علاقوں کی ضروریات کو پورا کیا جائے گا جو پیچھے رہ گئے ہیں۔ اس ضمن میں جنوبی بلوچستان، سندھ کے بعض اضلاع، گلگت بلتستان کے لئے مناسب فنڈز مختص کیے گئے ہیں۔ جنوبی پنجاب کے اضلاع میں انفراسٹرکچر کے منصوبوں کے لئے بھی فنڈز مختص کیے گئے ہیں۔ اسی طرح انضمام شدہ علاقوں کے لئے 54 ارب روپے کے فنڈز مختص کیے گئے ہیں۔ سوشل سیکٹرز مین ہائر ایجوکیشن کمیشن کے لئے 42 ارب روپے رکھے جا رہے ہیں

اجلاس کو بتایا گیا کہ پبلک پرائیویٹ پارٹنرشپ اتھارٹی کے قیام کے بعد متعدد منصوبوں کی تکمیل کے لئے کام جاری ہے۔ ان منصوبوں میں سکھر حیدرآباد موٹر وے، سیالکوٹ کھاریاں موٹروے کے منصوبے ایڈوانس سٹیج پر ہیں۔ جبکہ دیگر منصوبے جن میں کراچی سرکلر ریلوے، کے پی ٹی پپری فریٹ کواریڈور، کھاریاں راولپنڈی موٹروے، بلکسر میاںوالی روڈ، کوئٹہ کراچی چمن ہائی وے منصوبوں کا اجرا اسی سال کر دیا جائے گا۔ 

حکومت نے پہلی دفعہ پی ایس ڈی پی میں  وی جی ایف (وائیبیلٹی گیپ فنڈ) کے لئے 61 ارب روپے مختص کیے ہیں تاکہ پبلک پرائیویٹ پارٹنرشپ ماڈل کے تحت منصوبوں کی کامیابی سے تکمیل کو یقینی بنایا جا سکے۔ 

 

وزیرِ اعظم عمران خان نے اجلاس سے خطاب کرتے اس امر پر زور دیا کہ ترقیاتی منصوبوں پر عمل درآمد کی رفتار میں  تیزی لائی جائے تاکہ معاشی استحکام کے ثمرات شرح نمو اور نتیجتاً پاکستان کے عوام کی بہتری و فلاح کی صورت میں لانے کو یقینی بنایا جا سکے۔