وزیرِ اعظم عمران خان کی زیر صدارت ٹیکنالوجی پر مبنی ملکی  مصنوعات  کی برآمدات میں اضافے کے حوالے سے وزارتِ سائنس اینڈ ٹیکنالوجی کی بریفنگ

February 24, 2020

وزیرِ اعظم عمران خان کی زیر صدارت ٹیکنالوجی پر مبنی ملکی  مصنوعات  کی برآمدات میں اضافے کے حوالے سے وزارتِ سائنس اینڈ ٹیکنالوجی کی بریفنگ

 

اجلاس میں وزیر برائے سائنس اینڈ ٹیکنالوجی چوہدری فواد احمد، مشیر تجارت عبدالرزاق داؤد، وزیر برائے  نارکاٹیکس کنٹرول شہریار آفریدی، چیئرمین سرمایہ کاری بورڈ سید زبیر گیلانی ، متعلقہ وفاقی سیکرٹری صاحبان اور سینئر افسران شریک 

 

وزیرِ برائے سائنس اینڈ ٹیکنالوجی نے وزیرِ اعظم کو ملکی درآمدات میں کمی لانے کے لئے   متبادل  درآمدات (امپورٹ سبسٹی چیوشن)،  بائیو ٹیکنالوجی پر مبنی مصنوعات کی  پیداوار  اوربرآمدات  میں اضافے  اور ہائی ٹیک مصنوعات کے فروغ  پر تفصیلی بریفنگ دی

 

وزیر برائے سائنس اینڈ ٹیکنالوجی نے بتایا کہ وزارت سائنس اینڈ ٹیکنالوجی کی جانب سے  کیمیکلز، بائیوٹیکنالوجی، مشینری، ٹیکسٹائل ،  بیس میٹلز، پلاسٹک و دیگر اقسام کی 252 مصنوعات کی نشاندہی کی گئی ہے   جن کی پیداوار اور  معیار کو بہتر بنا کر  عالمی سطح پر زرمبادلہ کمایا جا سکتا ہے اور درآمدات میں خاطر خواہ کمی لائی جا سکتی ہے۔ اس حوالے سے وزارت سائنس اینڈ ٹیکنالوجی تین، سات اور دس سالہ پروگرام مرتب کر رہی ہے۔ 

 

ملک میں ہائی ٹیک انڈسٹرئیل ڈویلپمنٹ کے  ضمن میں ملکی استعداد اور مستقبل کے لائحہ عمل پر  بھی تفصیلی  بریفنگ۔ وزیرِ سائنس اینڈ ٹیکنالوجی نے   اس حوالے سے وزیرِ اعظم کو متعدد اہم  منصوبوں کی تجاویز پیش کی ۔ 

وزیر اعظم کو بتایا گیا کہ پہلے مرحلے میں ہربل، فوڈ اور ادویات کے شعبے پر توجہ دی جا ئے گی تاکہ جہاں برآمدات کی اقسام میں وسعت لائی جائے وہاں مجموعی ملکی پیداوار میں ٹیکنالو جی پر مبنی مصنوعات کی برآمدات کے شیئر میں اضافہ کیا جا سکے اور اس کو 2030تک تین فیصد تک لایا جا سکے

اجلاس میں جہلم انڈسٹرئیل بائیوٹیکنالوجی پارک کے قیام پر پیش رفت اور اس سے جڑے معاملات پر بھی وزیرِ اعظم کو بریف کیا گیا 

    

وزیرِ اعظم نے  ٹیکنالوجی پر مبنی مصنوعات کی ملکی سطح پر پیداوار اور برآمدات میں اضافے کے حوالے سے وزیر سائنس  اینڈ ٹیکنالوجی  کی تجاویز کو سراہتے ہوئے یقین دلایا کہ حکومت سائنس اینڈ ٹیکنالوجی کے فروغ میں ہر ممکنہ تعاون فراہم کرے گی۔ 

 

اجلاس کے آغاز میں وزیرِ سائنس اینڈ ٹیکنالوجی نے وزیرِ اعظم کو بتایا کہ وزارتِ سائنس اینڈ ٹیکنالوجی نے حال ہی میں  لاہور کے مرکزی علاقے میں واقع پاکستان کونسل فار سائنٹیفک ایند انڈسٹرئیل ریسرچ (پی سی ایس آئی آر) کی اربوں روپوں کی پچیس ایکٹر زمین ایک سیاسی رہنما کے قریبی رشتہ دار سے واگذار کرائی ہے  ۔ مذکورہ شخص نے اپنے تعلقات اور اثرو رسوخ کی بنا پر ایک عرصے سے  اس  بیش قیمت زمین پر ناجائز قبضہ کر رکھا تھا۔ وزیرِ اعظم نے سرکاری زمین کو ناجائز قبضے سےواگذار کرانے پر وزیر سائنس اینڈ ٹیکنالوجی اور وزارت کے افسروں کی کارکردگی اور کاوشوں کو سراہا۔