وزیرِ اعظم عمران خان سے معروف ایڈوائزی اور کنسلٹنٹ کمپنی، میکنزی کے گلوبل منیجنگ ڈائریکٹر کیون سنیدر کی ملاقات

February 11, 2020

 وزیرِ اعظم عمران خان سے معروف ایڈوائزی اور کنسلٹنٹ کمپنی، میکنزی کے گلوبل منیجنگ ڈائریکٹر کیون سنیدر کی ملاقات

٭ ملاقات میں و زیر اعظم کے مشیر محمد شہزاد ارباب، وزیر خزانہ خیبر پختونخواہ تیمور سلیم خان جھگڑا، چیئرمین سرمایہ کاری بورڈ سید ذوالفقار حیدر گیلانی بھی موجود

٭  وفد نے وزیرِ اعظم کو مختلف شعبوں میں منصوبہ بندی اور انتظامی امور میں فراہم کی جانے والے تجاویز، آراء  اور معاونت کے حوالے سے بریف کیا۔ 

٭ کیون سنیدر نے وزیرِ اعظم کو بتایا کہ میکنزی کمپنی گذشتہ کئی سالوں سے پاکستان میں خدمات سرانجام دے رہی ہے اور پالیسی سازی خصوصاً گڈگورننس اور مختلف شعبوں میں موثر پالیسی سازی کے ضمن میں اپنی ماہرانہ رائے اور تجاویز مختلف اداروں کو فراہم کرتی رہی ہے تاکہ عوامی مفاد  پر مبنی پالیسیوں کی تشکیل اور بہتر انتظام کو یقینی بنایا جا سکے۔

٭ وزیرِ اعظم نے وفد سے بات چیت کرتے ہوئے کہا کہ حکومت کی اولین ترجیح ایز آف ڈوئنگ بزنس (کاروبار میں سہولت کاری) اور سیاحت کا فروغ ہے۔ انہوں نے کہا کہ ماضی میں حکمران طبقے نے اپنے مفادات کے لئے کرپشن کی اور اس مقصد کے لئے اداروں کو کمزور کیا گیا۔ سول اداروں کے کمزور ہونے سے کرپشن اور عوام کی تکالیف میں اضافہ ہوا اور حکومت کی جانب سے عوامی مفادات کے تحفظ کی صلاحیت متاثر ہوئی۔ انہوں نے کہا کہ موجودہ حکومت نے ملک کی معاشی صورتحال کے تناظر میں کاروباری طبقے کو ہر ممکن سہولت فراہم کرنے کا عزم کر رکھا ہے تاکہ کاروبار میں آسانیاں پیدا ہوں اور معاشی عمل تیز ہو جس سے سماجی و معاشی ترقی ممکن بنائی جا سکے۔ 

٭ سیاحت پر بات کرتے ہوئے وزیرِ اعظم نے کہا کہ پاکستان میں سیاحت کا بے شمارپوٹینشل موجود ہے۔ سیاحت کے فروغ سے جہاں زرمبادلہ کمانے میں مدد ملے گی وہاں نوجوانوں کے لئے نوکریوں کے بے شمار مواقع پیدا ہوں گے۔ انہوں نے کہا کہ سیاحت کے فروغ  خصوصاً انفراسٹرکچر کے قیام اور مقامی اقدار کے مطابق سیاحت کا ماحول اور سہولتیں فراہم کرنے کے حوالے سے میکنزی کی جانب سے فراہم کی جانے والی ماہرانہ رائے کا خیر مقدم کیا جائے گا۔ 

 ٭ ملاقات میں حکومتی شعبے میں اخراجات میں کمی لانے اور سرکاری پیسے کے استعمال میں کفایت شعاری اور اسکا بہترین استعمال یقینی بنانے کے حوالے سے بھی تبادلہ خیال

٭ وزیرِ اعظم نے کہا کہ توانائی کے شعبے میں ماضی  کے حکمرانوں کی بدانتظامیوں اور ناقص منصوبہ بندی کا سارا بوجھ عوام کو برادشت کرنا پڑ رہا ہے۔ توانائی کے شعبے میں  مختلف مد میں ہونے والے نقصانات کو روکنا اور عوام پر پڑنے والے  بوجھ میں کمی لانا حکومت کی اولین ترجیح ہے۔ 

٭ وزیرِ اعظم نے کہا کہ ان شعبوں میں بین الاقوامی طور پر تسلیم شدہ بہترین طرز عمل اور  زمینی حقائق کو مد نظر رکھ کر مرتب کی جانے والی سفارشات کا خیر مقدم کیا جائے گا۔