وزیرِ اعظم عمران خان کو صوبہ پنجاب میں صحت کی سہولیات کی فراہمی میں بہتری کے ضمن میں پبلک پرائیویٹ پارٹنرشپ کے تحت روڈ میپ پر بریفنگ

September 02, 2019

لاہور: 2 ستمبر 2019
وزیرِ اعظم عمران خان کو  صوبہ پنجاب میں صحت کی سہولیات کی فراہمی میں بہتری کے ضمن میں پبلک پرائیویٹ پارٹنرشپ  کے تحت روڈ میپ پر بریفنگ-

 بڑھتی ہوئیآبادی  کے تناسب سے  صحت کی سہولیات  اور ہسپتالوں میں اضافے کو نظر انداز کیے جانے  سے صحت عامہ کے مسائل پیدا ہوئے۔

موجودہ حکومت  صوبہ بھر میں تقریبا     9 نئے بڑے ہسپتال تعمیر کرے گی۔

اس سال کے آخر تک تقریبا 72 لاکھ ہیلتھ کارڈ مستحقین میں تقسیم کئے جائیں گے جس سے تقریبا ساڑھے تین کڑور خاندان مستفید ہوں گے۔ بریفنگ۔

پنجاب میں ہیلتھ سروس ڈلیوری میں واضح بہتری کے لئے پبلک پرائیویٹ پارٹنرشپ کے تحت روڈ میپ پر شرکاء کو بریفنگ دیتے ہوئے وزیر صحت نے اس ضمن میں مختلف تجاویز اور مجوزہ لائحہ عمل پر سفارشات پیش کیں۔

وزیراعظم عمران خان نے اجلاس سے خطاب کرتے ہوئے کہا کہ صوبہ بھر کے ہسپتالوں میں بالعموم اور لاہور کے بڑے ہسپتالوں میں بالخصوص انتظامی امور میں واضح بہتری لائ جائے۔ انتظامی مشکلات کی وجہ سے لوگ علاج معالجے کی  بہتر سہولیات ہونے کے باوجود مشکلات کا سامنا کرتے ہیں۔ وزیر اعظم نے اس ضمن میں ایک مربوط نظام اور ایک موثر حکمت کو ہنگامی بنیادوں پر وضع کرنے کی ہدایت کی اور ساتھ ہی ساتھ ضلعی سطح پر ہسپتالوں میں سروس ڈلیوری کی بہتری کے لئے بھی ہدایات دیں۔

صوبہ خیبر پختونخواہ میں عوام نے پاکستان تحریک انصاف حکومت کی جانب سے صحت  کے شعبے میں انقلابی اقدامات کے نتیجے میں مثبت تبدیلی پر بھرپور اعتماد کا اظہار کیا ۔ صوبہ پنجاب میں اس کے بر عکس سارا بجٹ لاہور پر لگا دیا گیا اور باقی صوبہ محرومی کا شکار ہو گیا۔ وزیراعظم


اجلاس میں وزیر اعلی پنجاب سردار عثمان بزدار،  صوبائی وزیر صحت ڈاکٹر یاسمین راشد، مشیر وزیر اعلی ڈاکٹر سلمان شاہ،  چیف سیکرٹری پنجاب یوسف نسیم کھوکھر اور متعلقہ محکموں کے سینئر افسران شریک۔


مشیر وزیراعظم عبدالرزاق داود، چیئرمین بورڈ آف انویسٹمینٹ سید زبیر حیدر گیلانی، معاون خصوصی ڈاکٹر فردوس عاشق اعوان اور نعیم الحق  بھی اجلاس میں موجود تھے