وزیراعظم عمران خان کی زیر صدارت سول سروس ریفارمز ٹاسک فورس کا اجلاس

February 08, 2019

وزیراعظم عمران خان کی زیر صدارت سول سروس ریفارمز ٹاسک فورس کا اجلاس ۔

 

* وزیراعظم کی اجلاس کے دوران گفتگو 

 

* 60

اور 70کی دہائی میں پاکستان کی سول سروس اس خطے کی سب سے بہترین سروس تھی اور خطے کے دیگر ممالک ہم سے سیکھنے آتے تھے ۔ بدقسمتی سے سیاسی مداخلت سے سول سروس کا زوال شروع ہوا ۔  

 

* ہماری حکومت نیک نیتی کے ساتھ ریفارمز کا ایجنڈا لے کر آئی ہے اور عوامی فلاح و بہود کی خاطر نظام میں بہتری لانے کی خواہش مند ہے ۔احتساب اور میرٹ ہی نظام میں بہتری لانے کے اصول ہیں ۔ 

 

* ہماری حکومت کا مشن ہے کہ بیوروکریسی کو سیاسی مداخلت سے بچایا جائے اور ہر تقرری صرف میرٹ کی بنیاد پر کی جائے ۔ 

 

* خیبر پختونخوا میں ہماری حکومت نے سروس کی انتظامی ڈھانچے میں تبدیلیاں لائی جس کی وجہ سے گورننس میں بہتری آئی ۔ 

 

* سول سرونٹس کو بے جا تنگ کرنے سے کام رک جاتا ہے ۔ پوسٹ پر مدت ملازمت کو تحفظ فراہم کیا جائے گا تاکہ ڈیلیوری میں تسلسل قائم رہے ۔ 

 

* سرکار کے زیر انتظام کمپنیوں اور اداروں کے بورڈزمیں اچھی شہرت اور اہل افراد کو شامل کیا جارہا ہے تاکہ عوام کو بہتر سہولیات اور سروسز مہیا کی جاسکیں ۔ 

 

* تعلیم اورصحت کے شعبے سب سے زیادہ اہمیت کے حامل ہیں ۔ وسائل کے ضیاع کو روکنا ہوگا ۔ 

 

* اسپیشلائزیشن کا دور ہے ، ہر شعبے میں ماہر افراد ہی کام کرسکتے ہیں ۔ دُنیا کے تمام ترقی یافتہ ممالک میں ایک قدر مشترک ہے اور وہ  ماہر افراد کی میرٹ پر بھرتی ہے ۔ 

 

* لوکل گورنمنٹ کا ایسا ماڈل لا رہے ہیں جس میں مقامی نمائندے عوامی فلاح و بہود میں بھرپور کردار ادا کریں گے ۔ 

 

* سیاست دانوں کی ٹریننگ بھی ضروری ہے تاکہ سول سروس کو سیاسی مداخلت سے بچایا جائے اور بیوروکریٹ بلا خوف و خطر اپنی ذمہ داریاں انجام دے سکیں ۔