رمضان المبارک۸ ۱۴۳ھ/ ۲۰۱۷ء کے آغاز پر وزیر اعظم اسلامی جمہوریہ پاکستان محمد نواز شریف کا قوم کے نام پیغام

بِسْمِ اللّه ِ الرَّحْمٰنِ الرَّحِیْمِ 
 رمضان المبارک کی آمد پرمیں تمام اہلِ اسلام کو دل کی گہرا ئیوں سے مبارک باد پیش کرتا ہوں۔ یہ اللّه تعالیٰ کا فضل وکرم ہے کہ اس نے ہمیں ایک بار پھراِس ماہِ مبارک کے فیوض وبرکات سے مستفید ہونے کا موقع فراہم کیا ہے ۔میری دُعا ہے کہ ہم سب کی زندگی میں اِس طرح کے مبارک مواقع بار بار آتے رہیں۔اللّه سے یہ بھی دعا ہے کہ وہ ہمیں اپنے مہمان کی، اس کے شایانِ شان، قدر دانی کی توفیق بھی ارزاں کرے۔ 
 روزہ عبادت بھی ہے اوراس کے ساتھ طرزِ زندگی بھی۔جہاں اس کا مقصدتقویٰ پیدا کرنا ہے وہاں یہ انسان کی زندگی میں نظم و ضبط بھی لاتا ہے۔ اللّه کا بندہ اس کے حکم کی اطاعت کرتے ہوئے خود کوہر اُس کام سے روکتا ہے جس کو انجام دینے کی عام دنوں میں اجازت ہوتی ہے- اس ماہِ مبارک کے ذریعہ اللّه رب العزت نے ہماری اِس انداز سے تربیت کا اہتما م فرمایا ہے کہ بندہ اپنے اندر اتنی قوت اور استقامت پیدا کر لے تاکہ وہ آنے والی مشکلات کا مقابلہ بہادری کے ساتھ کر سکے۔روزہ غیر معمولی حالات کو خندہ پیشانی سے برداشت کرنا سکھا تا ہے اور ہمیں جملہ معاشرتی برائیوں کے خلاف جہاد کرنے اور اپنے معاشرے کو صحت مند، پاکیزہ اور باہمی محبت سے بھرپور بنانے کا سبق دیتا ہے۔
 روزہ محض بھوک پیاس کانا م نہیں ہے۔یہ تزکیہ نفس کا نام ہے۔ انسان خود کویا دوسرے انسانوں کوتو دھوکا دے سکتا ہے لیکن اللّه تعالیٰ کو نہیں جو دِلوں کے حال بھی جانتا ہے۔ہم نے اس ماہِ مبا رک میں اپنا احتساب کرتے ہوئے متنبہ رہنا ہے کہ کیسے نفس کے حملوں سے خود کومحفوظ بنایا جائے۔
 ماہ مبارک کی آمد پر میری تمام ہم وطنوں سے درخواست ہے کہ وہ اپنے اندر اتحاد و اتفاق،برداشت ،رواداری ،خیر خواہی ،اور احترام انسانیت کے جذبہ پر مبنی اعلیٰ صفات پیداکریں کیونکہ یہی وہ تعلیمات نبوی A018; ہیں جن کو ہم اپنا کر ہر قسم کی منفی سوچ کی حامل قوتوں کا مقابلہ کرسکتے ہیں۔ اِن اعلیٰ اخلاقی اقدار کو ہماری زندگی میں شامل کرنے میں روزہ بنیادی کردار ادا کر سکتا ہے۔اس کے ساتھ اِس مبارک ماہ میں ہمیں اپنے اردگرد موجود بے سہارا ،غریب اور مستحق افراد کی مدد کا بھی خصوصی اہتمام کرنا چاہیے -ہمیں اس معاملے میں رسالت مآب A018; کے اس اسوہ حسنہ کو سامنے رکھنا چاہیے کہ وہ اس مہینے میں سخاوت کاایسا بہتا دریا بن جاتے تھے جوسب کو سیراب کرتا تھا۔
میری دُعا ہے کہ اللّه  تعالیٰ ہمیں اسلام کی تعلیمات کے مطابق اورخود احتسابی کے جذبے کے ساتھ روزے رکھنے کی توفیق عطا فرمائے اور موجودہ حکومت کو وطن عزیز کے درپیش مسائل کے حل کرنے میں مدد فرمائے-